Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Jul 8, 2019

احتساب کے فقدان کے باعث چڑیا گھر تباہ حالی کا شکار

پاکستان میں زیادہ تر چڑیا گھر احتساب کے فقدان اور خراب گورننس کے باعث تباہ حالی کا شکار ہیں ۔ اس کے علاوہ غیر تربیت یافتہ عملہ ، سہولیات کے فقدان ، صلاحیت اور مالی وسائل کی کمی کی وجہ سے وائلڈ لاءف اور چڑیا گھر مزید پست صورتحال کے شکار ہیں ۔ ماہرین کے مطابق وائلڈ لاءف پارکوں اور ر چڑیا گھر وں کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے عام لوگوں کو جانوروں کے حقوق اور ماحول کے لیے ان کی اہمیت کے بارے میں آگاہی دینا ہو گی ۔ ماہرین ان خیالات کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی ) کے زیر اہتمام ’پاکستان میں چڑیا گھر وں کی حالت ‘ کے عنوان سے ایک سیمینار کے دوران کر رہے تھے ۔ اس موقع پر ایس ڈی پی آئی کے ڈاکٹر عمران خالد، کامسیٹس یونیورسٹی کی کیٹی سپرا، ڈاکٹر ندیم عمر تارڑ اور بائیوڈائیورسٹی کے ماہر ڈاکٹر اعجاز احمد نے بھی اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ 

سینٹر فا ر کلچر اینڈ ڈیویلوپمنٹ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹرڈاکٹر ندیم عمر تارڑ نے کہا کہ جانور ہیومن ہیبیٹیٹ کا حصہ ہیں اور دوسری سپیشیز کی طرح جانوروں کے بھی حقوق ہوتے ہیں جن سے عام لوگوں کو آگاہی دینی چاہیے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ انتظامیہ کی کمزوری، احتساب کے فقدان اور خراب گورننس کی وجہ سے ملک میں زیادہ تر چڑیا گھر خراب حالت کا شکار ہیں ۔ بائیوڈائیورسٹی کے ماہر ڈاکٹر اعجاز احمد نے کہا کہ جن جانوروں کی اقسام ختم ہو رہی ہیں ان کو بچانے کے لیے چڑیا گھر اہم کردار ادا کر سکتے ہیں ۔ ایس ڈی پی آئی کے ڈاکٹر عمران خالد نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلیاں نہ صرف انسانوں پر بلکہ جانوروں پر بھی منفی طور پر اثر انداز ہو رہی ہیں ۔ جس کے لیے حکومت کو کم از کم چڑیا گھروں میں جانوروں کی حفاظت کے لیے بین الا اقوامی طرزپر ضروری اقدامات اٹھانے چاہیں ۔ کامسیٹس یونیورسٹی کی کیٹی سپر نے جانوروں اور چڑیا گھر کے تحفظ کے لیے تعلیمی پروگرام اور ریسرچ کی اہمیت پر زور دیا ۔