Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

ہم نیو

Published Date: Dec 26, 2019

آئی ایم ایف نے پاکستانی معیشت کی تعریف کر دی

جائزہ رپورٹ کے مطابق پاکستان نے رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی کے بیش تر معاشی اہداف حاصل کر لیے ہیں، افراط زر میں اضافہ رک گیا ہے جب کہ مارکیٹ اور سرمایہ کاروں کا اعتماد بھی بحال ہو رہا ہے۔
ان سب مثبت پہلوؤں کے ساتھ ہی آئی ایم ایف مشن چیف نے پاکستان پر اسٹرکچرل اصلاحات میں بہتری لانے پر زور بھی دیا ہے۔
آئی ایم ایف نے پاکستان میں مہنگائی میں کمی کا عندیہ دے دیا
پاکستان کی معاشی کارکردگی کو بین الاقوامی ادارے تسلیم کر رہے ہیں تو عالمی مالیاتی فنڈ بھی معاشی اہداف پر مطمئن ہے۔
آئی ایم ایف ایگزیکٹو بورڈ جائزہ کے بعد حکام نے پروگرام پر عملدرآمد کو درست سمت میں قرار دیا ہے، مشن چیف رمریز ریگو  نے اس بابت کہا ہے کہ پاکستان نے پہلی سہ ماہی میں تمام معاشی اہداف حاصل کیے ہیں، مارکیٹ اور سرمایہ کاروں کا اعتماد بحال ہونے کے ساتھ پاکستان میں افراط زر کی شرح میں بھی ٹھہراؤ آگیا ہے۔
جائزہ رپورٹ کے مطابق پاکستان نے پہلی سہہ ماہی میں بیرونی شعبہ، زرمبادلہ کے ذخائر کے اہداف حاصل کر لیے ہیں۔
رمریز ریگو کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کی معاشی ٹیم دیگر اہداف حاصل کرنے کیلئے بھی پرعزم ہے۔
انہوں نے یہ خبر بھی سنائی کہ ایکس چینج ریٹ مستحکم ہونے کے باعث مہنگائی میں کمی ہو سکتی ہے۔
عالمی مالیاتی اداروں نے جائزہ رپورٹ میں چند معاملات پر بہتری پر بھی زور دیا، حکام کا کہنا ہے کہ پاکستان کو پروگرام میں رہتے ہوئے ٹیکس ریونیو کیلئے مزید کام کرنے کی ضرورت ہے اور پاور سیکٹر میں گردشی قرض کا سامنا بھی ہے۔
آئی ایم ایف سے قرضے کی دوسری قسط منظور
آئی ایم ایف حکام نے جائزہ رپورٹ میں تجویز دی ہے کہ صوبوں کی جانب سے مالی نظم و ضبط کو برقرار رکھنے کی ضرورت ہے اور یہ بھی کہ سماجی تحفظ کے نیٹ ورک کو وسعت دینےکے لیے کوششیں جاری رکھی جائیں ساتھ ہی یہ کہ زرمبادلہ ذخائر میں اضافے اور بیرونی استحکام کے لیے مارکیٹ میں متعینہ ایکسچینج ریٹ برقرار رکھا جائے۔
جائزہ رپورٹ میں آئی ایم ایف حکام نے کہا کہ ادائیگیوں میں کوئی بیرونی بقایاجات نہیں ہیں تاہم ستمبر کے آخر تک کے 5 اشاریے پورے نہیں ہوئے، ٹیکس ریفنڈ بقایاجات اور توانائی کے شعبے کے بقایاجات بھی پورے نہیں ہو سکے جو رواں ماہ کے آخر تک پورے ہونے کی توقع ہے۔
 
Source: http://humnews.pk/latest/221859/