Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

جنگ

Published Date: Mar 3, 2020

بھارت کی انتہاپرست حکومت سندھ طاس معاہدہ کیلئےخطرہ بن سکتی ہے،مقررین

اسلام آباد (نمائندہ جنگ) ماہرین کاکہناہے کہ مودی کی زیرقیادت انتہائی قوم پرست بھارتی حکومت سندھ طاس معاہدے کے لئے خطرہ بن سکتی ہے۔کشمیرکے حوالےسے آرٹیکل 370 اور 35A کو ختم کرنااور شہری ترمیمی بل (سی اے بی) کو متعارف کرانے جیسے حالیہ انتہائی اقدامات سے علاقائی امن پر بھی منفی اثرات مرتب ہوں گے۔ ان خیالات کا اظہار ماہرین نے پالیسی ادارہ برائے پائیدار تر قی ”ایس ڈی پی آئی“ کے زیر اہتمام ’ہندوستان اور پاکستان کے مابین سندھ طاس معاہدہ اور تنازعات ‘ پرکتاب کے اجراءکے موقع پرکیا۔ کتاب کے مصنف بیرسٹر نسیم احمدباجوہ نے کہا کہ سندھ طاس معاہدے پر دستخط کرنے کے وقت پاکستان کی پوزیشن خاص طور پر قانونی بنیادوں پرکمزور تھی کیونکہ معاہدہ بنیادی طور پر ہندوستان کے مجوزہ مسودے پر مبنی تھا اور ہندوستان ایک مضبوط پوزیشن میں تھا، 1960 میں معاہدے پر دستخط کرنافوجی آمر کاصوابدیدی فیصلہ تھا جس پر پاکستان میں انجینئروں یا ریاست کے ماہرین یا صحافیوں کے کسی آزاد فورم نےتبادلہ خیال یابحث نہیں کی۔ پاکستان کا بین الاقوامی فورمز پر اپنے کیس ہارنے کی بنیادی وجہ ناقص منصوبہ بندی اور ان لوگوں یا ماہرین کو بھیجنا ہے جو ملک کا کیس لڑنے کے لئے اہل نہیں ہوتے اور نہ ہی کوئی تیاری کے ساتھ جاتے ہیں۔ ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایس ڈی پی
آئی ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہاکتاب میں پانی کے مسائل،موجودہ صورتحال اور قانونی اور دیگر متعلقہ مضمرات کی عمدہ ترکیب پیش کی گئی ہے۔ کتاب میں موجود حقائق نے ہندوستان اور پاکستان کے مابین آبی تنازعات کی متوازن تصویر پیش کی ہے۔نامور آبی ماہراورچیئر پرسن بورڈ آف گورنرز ایس ڈی پی آئی شفقت کاکاخیل نے کہا کہ سات سو سے زیادہ سرکاری دستاویزات ، تحقیقی مضامین اور قانونی متن کے ساتھ کتاب ایک زبردست کوشش ہے اور اس موضوع پر کام کرنے والے محققین کو فائدہ ہو گا۔
 
Source: https://jang.com.pk/news/740876