Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Feb 1, 2019

تھِنک ٹینک کی عالمی درجہ بندی میں پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی پاکستان میں سہرفرست ، جنوبی ائشیا، میں پندرویں ، دنیا بھر میں ننانویں درجہ پر قرار پای

اسلام آباد ( ) ۔ امریکہ کی یونیورسٹی آ ف پینسلو نیہ کے زیر انتظام تھنک ٹینک و سوِل سوسائٹی پروگرام نے عالمی سطح پر کام کرنے والے 8162 تھِنک ٹینک کی2018 کی سالانہ درجہ بندی کر کے فہرست شائع کر دی ہے۔ جو کہ دنیا بھر میں بیک وقت جاری کی ہے۔ 
اس عا لمی درجہ بندی کے مطابق پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی ) پاکستان میں پہلے نمبر پر ، جنوب مشرقی ایشیاء و پیسفک میں 15 ویں اور عالمی(Non-US) تھِنک ٹینکس میں99 نمبر پر رہا۔ تھنک ٹینک و سوِل سوسائٹی پروگرام گذ شتہ 13 سالوں سے عالمی سطح پر کام کرنے والے تھِنک ٹینک کی کا رکردگی کا مختلف پیمانوں اور زاویوں سے کڑا جائزہ لینے کے بعد ان کے مختلف شعبہ جات کے حوالے سے درجہ بندی کرتا ہے۔ 
1602018کی تھِنک ٹینک کی عالمی درجہ بندی کا اجرا ء کرتے ہوئے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ، ایس ڈی پی آئی ،ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ عالمی سول سوسائٹی اور تھِنک ٹینکس کو درپیش تمام روکاوٹوں کے باوجود، ایس ڈی ڈی آئی نے اپنی درجہ بندی کو برقرار رکھا ہے اور عالمی سطح پر 44 ویں بہترین کوالٹی اشورینس، 53 ویں خودمختار و آزاد تھِنک ٹینک اور67 ویں بہتر ین ماحولیاتی پالیسی کے ادارے کے طور پرُ ابھرا ہے۔ ایس ڈی پی آئی نے عالمی سطح پر Non-US تھِنک ٹینکس میں 99 ویں پوزیشن حاصل کی ہے ، اور اس زمر میں ایس ڈی پی آئی پاکستان سے ایک واحد ادارہ ہے جسے 144 اعلی غیر امریکی تھِنک ٹینکس کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے 25 پالیسی ریسرچ کے اداروں میں ایس ڈی پی آئی سہر فہرست رہا ۔
وائس چانسلر کمیٹی کے چیئرمین اور ریکٹر انٹرنیشنل اسلامی یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر معصوم یاسین زئی نے کہا کہ پاکستانی تھِنک ٹینک کا عالمی درجہ بندی میں نمائیاں حیثیت پوری قوم کے لئے باعثِ فخر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایس ڈی پی آئی کا دنیا کے اعلیٰ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے ساتھ درجہ بندی پاکستان کے سافٹ امیج کی ایک اچھی مثال ہے، جس کی حمایت کی جانی چاہئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں یونیورسٹیوں کو چوتھے صنعتی انقلاب کے محرکات کو مدِنظر رکھتے ہوئے معاشرے کی ضرورت کے مطابق اپنی تحقیق اور نصاب کا جائزہ لینا ہو گا۔ 
اس موقع پر سابق سفیراورچیئرمین بورڈ آف ڈائریکٹر، ایس ڈی پی آئی شفقت کاکا خیل نے کہا کہ یہ ہمارے لیے باعثِ فخر ہے کہ ایس ڈی پی آئی مسلسل دنیا کے 100 بہترین ریسرچ تھِنک ٹینکس میں شمار ہوتا ہے ۔ اگرچہ ، ایس ڈی پی آئی کو وسائل کی کمی کا سامنا ہے لیکن ان تمام رکاوٹوں کے باوجود اس ادارے کے عملے، ماہرین اور قیادت کی لگن او ر انتھک محنت کا نتیجہ ہے کہ یہ ادارہ دنیا کے بہترین اداروں کے درمیان اپنی حیثیت برقرار رکھے ہوئے ہے۔ .
ایس ڈی پی آئی کے ریسرچ فیلو ڈاکٹر شفقت منیر نے کہا کہ سماجی تنظیموں کے لیے مواقع محدود ہو رہے ہیں جس کے باعث وہ مالی مشکلات کاشکار ہیں ۔ اس صورتحال میں سماجی خدمات کی انجام دہی انتہائی مشکلات کا شکار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسی صورتحال میں دنیا بھر کے تھِنک ٹینکس کی کارکردگی دباو کا شکار ہے اور وہ پالیسی سازی اور اس کے عمل درآمد میں خاطر خواہ کردار ادا کرنا ممکن نہیں رہا ۔ اس موقع پر ایس ڈی پی آئی کے ڈاکٹر محمود خواجہ نے کہا کہ پاکستان کے ہر شعبہ میں بہتری لانے کے لیے جدید ریسرچ سے استفادہ کرناضروری ہے۔ ساری دینا میں ریسرچ پر سرمایہ کاری کے ذریعے پائیدار ترقی یقینی بنائی جاتی ہے۔