Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Urdu Point Lahore

Published Date: Jul 20, 2019

حکومت اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ ایک ہی صفحے پر ہیں ،آئی ایم ایف کے تجویز کردہ بالخصوص ٹیکس بارے اقدامات پر حکومت کی طرف سے کوئی اختلاف نہیں

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – اے پی پی۔ 20 جولائی2019ء) چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) سید محمد شبر زیدی نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت اور آئی ایم ایف ایک ہی صفحے پر ہیں ،آئی ایم ایف کی طرف سے تجویز کردہ اقدامات بالخصوص ٹیکس کے حوالے سے اقدامات پر حکومت کی طرف سے کوئی اختلاف نہیں ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کے ز یرِ اہتمام ’پاکستان اکانومی اور آئی ایم ایف پروگرام کے حوالے سے ایک پالیسی سمپوزیم سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

 

اس موقع پرسابق وزیر خزانہ ڈاکٹر شمشاد اختر ، پاکستان میں تعینات آئی ایم ایف کی نمائندہ ماریا ٹریسا دبان اور ایس ڈی پی آئی سے ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

 

 

 

 

شبر زیدی نے کہا کہ ٹیکس ہی وہ واحد ذریعہ ہے جس سے معاشرے میں دولت کی منصفانہ تقسیم ممکن ہو سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں تقریبا ایک لاکھ کمپنیاں رجسٹرڈ ہیں جن میں سے صرف 60 ہزار ہی ٹیکس دیتی ہیں ۔

 

ان کا کہنا تھا کہ حالیہ بجٹ میں کئے جانے والے اقدامات پاکستان کی تاریخ میں مثالی ہیں جو پرانے طور طریقوں کو مکمل طور پر بدل دیں گے،اس کے علاوہ حکومت ٹیکس کے نظام میں آٹومیشن کے ذریعے کرپشن پر قابو پائے گی ۔ سابق وزیر خزانہ ڈاکٹر شمشاد اختر نے کہا کہ معاشی استحکام ملکی ترقی کے لئے ناگزیر ہے ۔ انہوں نے کہا کہ معاشی استحکام کے ساتھ ہر شعبے میں بھرپور اصلاحات سے ملک معاشی بحران سے جلد نکل آئے گا۔

 

آئی ایم ایف کے پروگرام پر تبصرہ کرتے ہوئے ڈاکٹر شمشاد نے کہا کہ آئی ایم ایف کے پروگرام میںتاخیر سے جانے کی وجہ سے بے یقینی میں اضافہ ہواجس سے معیشت پر بُرا اثر پڑا۔ ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے سوشل پروٹیکشن کے پروگرام کو مضبوط بنانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ حکومت معاشرے کے غریب طبقے پر بوجھ کو کم کرنے کے لئے براہ راست ٹیکس پر توجہ دے۔

 

پاکستان میں تعینات آئی ایم ایف کی نمائندہ ماریا ٹریسا دبان نے کہا کہ آئی ایم ایف کے 6 ارب ڈالر کے پروگرام کا مقصد پاکستان کے معاشی اصلاحاتی پروگرام کو سپورٹ کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ درمیانی مدت میں آئی ایم ایف پیکج کا ہد ف مضبوط ٹیکس کا نظام ، ایک آزاد مرکزی بینک، مارکیٹ بیس ایکسچینج ریٹ کا نظام اور قرضوں کی سسٹین ایبلٹی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف چاہتا ہے کہ پاکستان توانائی کے شعبے کو بہتر بنائے ، ایف اے ٹی ایف کی شرائط پر عمل درآمد اور اینٹی کرپشن کے اداروں کو مضبوط کیا جائے ۔

Source: https://www.urdupoint.com/daily/livenews/2019-07-20/news-1998820.html