Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

اُردو پوائنٹ

Published Date: Sep 16, 2019

حکومت ماحولیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کے لیے ضلعی سطح تک پائیدار منصوبہ بندی کرے، ماہرین

ماہرین نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ماحولیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کے لیے ضلعی سطح تک پائیدار منصوبہ بندی کرے۔ اس کے ساتھ ساتھ نوجوان نسل کو ماحولیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے ا سکول کی سطح پر آگاہی دی جائے۔ وہ ان خیالات کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کے زیر اہتمام ’عالمی تحریک برائے ماحولیاتی اقدامات‘ کے عنوان سے ایک مباحثے سے کررہے تھے۔
ماحولیاتی مسائل کی سینئر جرنلسٹ سعید خان نے کہا کہ دنیا پہلے ہی 1 ڈگری سینٹی گریڈکے عالمی درجہ حرارت کے نتائج بھگت رہی ہے جس کے آثار زیادہ شدید موسم، سیلاب، سطح سمندر میں اضافہ اور گلیشیئر کے پگھلنے کی صورت میں نظر آ رہے ہیں۔

انہوں نے متنبہ کیا کہ 2 ڈگری سینٹی گریڈ تک عالمی درجہ حرارت بڑھنے سے اس سے بھی خطرناک نتائج ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ضلعی سطح پر مئوثر اور پائیدار منصوبہ بندی کرے اور اپنے لوگوں کو ماحولیاتی تبدیلیوں کے نقصانات سے محفوظ رکھے۔

اس موقع پر ایس ڈی پی آئی کے ماحولیاتی یونٹ کے سربراہ ڈاکٹر عمران خالد نے کہا کہ شدید موسمیاتی ایونٹس میں باقاعدگی کی وجہ سے پاکستان ماحولیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے سب سے متاثر ملک ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی تبدیلی کے اثرات سے متاثرہ افراد میں سے بیشتر غریب اور کمزور ہیں ، جو غیر محفوظ علاقوں میں رہتے ہیں جن کو کھانے کی فراہمی تک مشکلات کا سامنا ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ حکومت زمینی حقائق کو مدنظر رکھے اور اس کے مطابق اپنی پالیسیاں اور منصوبے تیار کرے۔ ماحولیاتی اور سماجی انصاف کی آرگنائزر انعم را تھوڑ نے کہا کہ دنیا بھر میں 100 کے قریب کارپوریٹس اور کمپنیاں ہیں جو 70 فیصد گلوبل ایمشنز کی ذمہ دار ہیں۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جب تک امیر لوگ اور بڑی کارپوریٹس کو موسمیاتی تبدیلیوں کے سنگین نتائ ج کا ادراک نہیں ہوتا موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کا معاملہ ٹھنڈا رہے گا۔ اس کے علاوہ تقریب سے پروگریسو آر گینک فارمر، قاسم ترین ، فرائی ڈے فار فیوچر کیمپین کے نمائندہ اقبال بدردین، اور ماہر ماہولیاتی تبدیلی انعم زیب نے بھی اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔
 
Source: https://www.urdupoint.com/daily/livenews/2019-09-16/news-2063202.html