Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Urdu Point

Published Date: Apr 19, 2019

رانے روایتی مغربی سرمایہ داری نظام نے قدرتی ماحول کو تباہ کر دیا ہے‘ 2030ء تک گلوبل درجہ حرارت 1.5 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچ سکتا ہے جس کا سنگین اور ناقابلِ تلافی نقصان ہو گا‘ ڈاکٹر پریتم سنگھ

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – اے پی پی۔ 18 اپریل2019ء) آکسفورڈ سکول آف گلوبل اینڈ ایریا سٹڈیز کے پروفیسر ڈاکٹر پریتم سنگھ نے کہا ہے کہ پرانے روایتی مغربی سرمایہ داری نظام نے قدرتی ماحول کو تباہ کر دیا ہے جو آج ہم گلوبل وارمنگ اور بائیو ڈائیورسٹی کے نقصان کی صورت میں بھگت رہے ہیں، یہ سرمایہ داری نظام ماحول کو محفوظ رکھنے اور پائیدار ترقی کو یقینی بنانے میں ناکام رہا ہے لہٰذا ہمیں فوری طور پر ایک متبادل ’’ایکو سوشلسٹ‘‘ ڈویلپمنٹ ماڈل کو اپنانا چاہئے جو ماحول کو محفو ظ رکھے اور پائیدار ترقی کو یقینی بنائے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو یہاں پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کے زیر اہتمام ’’عالمی سطح پر سرمایہ داری نظام میں تبدیلیاں اور ایکو سوشلسٹ ڈویلپمنٹ ماڈل‘‘ کے عنوان سے ایک لیکچر کے دوران کیا۔

 

 

ڈاکٹر پریتم سنگھ نے کہا کہ سرمایہ داری نظام میں عالمی سطح پر بڑی تبدیلیاں رونماں ہو رہی ہیں جہاں گلوبل کیپٹل ترقی یافتہ ممالک ( جو نسبتاً کم آبادی والے ممالک ہیں) سے منتقل ہو کر ترقی پذیر ممالک (جو بڑی آبادی کے ممالک ہیں) میں جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 1980ء سے 2017ء تک کی مدت میں امریکہ، برطانیہ، جرمنی اور جاپان کی عالمی جی ڈی پی میں شیئر کم ہوئے ہیں جبکہ برازیل، بھارت اورچین کی عالمی جی ڈی پی کے شیئرز میں اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگر اسی طرح سرمایہ داری نظام میں مزید توسیع ہوتی رہی اور سلسلہ یوں ہی چلتا رہا تو غیر معمولی ماحولیاتی اور سماجی تباہ کاریوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تجویز کردہ متبادل ’’ایکو سوشلسٹ ڈویلپمنٹ ماڈل‘‘ ایک حقیقی ماحول دوست معیشت اور معاشرے کا تصور دیتا ہے جس پر پالیسی سازوں کو ضرور غور کرنا چاہئے۔ ڈاکٹر پریتم سنگھ نے ماحولیاتی تباہ کاریوں کے بارے میں خبردار کرتے ہوئے کہا کہ 2030ء تک گلوبل درجہ حرارت 1.5 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچ سکتا ہے جس کا سنگین اور ناقابلِ تلافی نقصان ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کے پاس اب صرف 11 سال سے بھی کم وقت ہے جس میں فوری اور ٹھوس اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے ڈائریکٹر پالیسی ڈاکٹر شفقت منیر نے کہا کہ ترقی پذیر معیشتوں کی اقتصادی پالیسیاں اور ترقی کے ماڈل کو ماحول دوست ہونا چاہئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ماحول کی حفاظت کے بغیر ہم پائیدار ترقی حاصل نہیں کرسکتے۔