Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

UrduPoint

Published Date: Aug 12, 2020

https://www.urdupoint.com/pakistan/news/islamabad/national-news/live-news-2545592.html

صنعتی فضلہ ماحول کی تباہی اور شہریوں کی صحت پر انتہائی مضر اثرات مرتب کر رہا ہے

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – اے پی پی۔ 12 اگست2020ء) صنعتی فضلہ ہمارے ماحول کی تباہی اور شہریوں کی صحت پر انتہائی مضر اثرات مرتب کر رہا ہے۔ ماحولیات کے شعبہ سے وابستہ ماہرین نے اس امر کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کی جانب سے ڈاکٹر محمود احمد خواجہ کی لکھی کتاب ’’ہمارے ماحول میں گھلا زہر‘‘ کی رونمائی کے موقع پر کیا۔
کتاب کے مصنف جو ایس ڈی پی آئی کے سینئر ایڈوائزر بھی ہیں، نے اس موقع پر اپنی گفتگو میں کہا کہ ان کی کتاب میں پنجاب، سندھ اور خیبرپختونخوا کے ان 38 مقامات کی نشاندہی کی گئی ہے جہاں زہریلا صنعتی مواد کھلے عام پڑا ہے اور ماحول کے علاوہ عوام الناس کے لئے صحت کے سنگین مسائل کا باعث بن رہا ہے۔ سابق وفاقی سیکرٹری برائے وزارت ماحولیاتی تبدیلیاں سیّد ابو احمد عاکف نے اس موقع پر کتاب کی مختلف جہتوں پر روشنی ڈالتے ہوئے اسے ماحولیات سے متعلق لکھی جانے والی کتابوں میں ایک اہم اضافہ قرار دیا۔

انہوں نے کہا کہ عمومی شعور میں اضافے کے لیے کتاب کے مندرجات کو زیادہ سے زیادہ عام کرنے کی ضرورت ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد سلہری نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ کتاب کی بدولت پالیسی کی سطح پر پائی جا رہی خامیوں کی نشاندہی میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ہاں قوانین تو موجود ہیں مگر متعلقہ اداروں کی کمزور استعداد کی وجہ سے قوانین پر مؤثر عملدرآمد اصل مسئلہ ہے جس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔
آل چائنا انوائرمنٹ فیڈریش (اے سی ای ایف) کی یاؤ لنگلنگ کا کہنا تھا کہ اس کتاب کی بدولت چین اور پاکستان کے سول سوسائٹی اداروں کے درمیان اس اہم مسئلے پر علمی تعاون میں اضافے کے لیے پیشرفت میں مدد ملے گی۔دنیا کے مختلف حصوں سے تعلق رکھنے والے ماحولیاتی ماہرین جن میں ڈاکٹر رولینڈ وبر، ڈاکٹر للان کورا، پروفیسر بجدے ایلو اور ڈاکٹر جوزف دگانی بھی شامل تھے، نے کتاب کے مندرجات پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس کاوش کے باعث صنعتی آلودگی کے ایک اہم مسئلے کو اجا گر کیا گیا ہے، جس کے حل پر فوری توجہ کی ضرورت ہے۔
ایس ڈی پی آئی کے جائنٹ ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر وقار احمد نے کہا کہ کتاب خصوصاً ان لوگوں کے لیے انتہائی مددگار ثابت ہو گی جو سماجی محاسبے کے حوالے سے کام کر رہے ہیں۔