Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Samaa.TV

Published Date: Jul 19, 2019

متوسط طبقے کو ٹیکس نیٹ میں لانے کیلئے اصلاحات کررہے ہیں، چیئرمین ایف بی آر

اسلام آباد میں جمعہ کو صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے کہا کہ عمران خان کی قیادت کے تحت ٹیکس دائرۂ کار کو بہتر بنانے کی ذمہ داری میری ہے، حوالہ اور ہنڈی سے ملکی معیشت کو بہت نقصان ہوا ہے۔

 

ان کا کہنا ہے کہ متوسط طبقے کو ٹیکس کے دائرۂ کار میں لانے کیلئے اقدامات کئے جا رہے ہیں، حکومت ایسے فیصلوں سے گریز کرے گی جو ٹیکسٹائل صنعت کیلئے نقصان دہ ہوں۔

 

شبر زیدی بولے کہ سیلز ٹیکس کے خاتمے، کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ اور کھانے پینے کی اشیاء پر ٹیکس کے نفاذ کے معاملات کے بارے میں گمراہ کن اطلاعات پھیلائی جارہی ہیں۔

 

صحافیو ں سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین ایف بی آر نے کہا کہ بورڈ تاجر برادری کے حقیقی مسائل حل کرنے کیلئے ان کے ساتھ مذاکرات کررہا ہے۔

 

چیئرمین ایف بی آر نے اپنی تبدیلی کی افواہوں کو واضح طور پر مسترد کردیا، بولے کہ میں یہاں موجود ہوں اور کام کررہا ہوں، حکومت شناختی کارڈ کی شرط پر عملدرآمد پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گی۔

 

انہوں نے مزید کہا کہ تاجر ہو یا کمپنی، پان والا ہو یا پھر چائے والا، سب کی رجسٹریشن ہوگی، امیر طبقہ زکوٰۃ کو جواز بناکر ویلتھ ٹیکس سے بھی نہیں بچ سکے گا، بڑے بڑے ڈاکٹروں سمیت کوئی بھی ایماندار شخص اپنا گھر نہیں بنا سکتا۔

 

چیئرمین ایف بی آر نے بیورو کریٹس کی بھاری کمائیوں پر بھی سوال دیا، ایس ڈی پی آئی کے تحت سیمینار میں بولے کہ ٹیکس فری ماحول کے عادی لوگوں کو شناختی کارڈ کی شرط ہضم ہی نہیں ہورہی، یہ ملک کی بقا کا سوال ہے، معیشت کو دستاویزی بنانے سے ملک کی تاریخ بدل جائے گی، میں عمران خان کی حکومت کو کریڈٹ دوں گا کہ انہوں نے پوزیشن لی ہے۔

 

چیئرمین ایف بی آر کا کہنا تھا ماضی میں ملکی معیشت صنعتوں کے بجائے تجارت کی طرف موڑ دی گئی، پانی، چاکلیٹ، جوتے تک امپورٹ ہوتے ہیں لیکن اب بجٹ میں ٹیکسوں کا پورا نظام بدل دیا گیا 

Source: https://www.samaa.tv/urdu/pakistan/2019/07/1616422/