Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

SDPI Press Release

Published Date: Sep 18, 2017

معاشی نظام میں موجود عدم مساوات دور کیے بغیر غربت کا خاتمہ ممکن نہیں

موجودہ معاشی پالیسیاں محض چند افراد کے حقوق کا تحفظ کرتی ہیں، ایس ڈی پی آئی اور آکسفیم کے تحت منعقدہ سیمینار سے مقررین کا اظہار خیال

اسلام آباد ( ) عدم مساوات دنیا بھر میں لاکھوں افراد کے غربت کا شکار رہنے کی بڑی وجہ ہے۔ غریب اور امیر کے درمیان بڑھتے ہوئے عدم تفاوت کے حوالے سے پاکستان کی صورت حال بھی مختلف نہیں اور اس ضمن میں اصلاح احوال کے لیے پالیسی سطح پر اہم اصلاحات اور ٹیکسوں کے نظام کی خامیاں دور کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار مقررین نے پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی ( ایس ڈی پی آئی ) اور آکسفیم ان پاکستان کے تحت ’ عدم مساوات اور غربت کا باہمی تعلق ‘ کے زیر عنوان سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آکسفیم جی بی کے چیف ایگزیکٹو مارک گولڈ رنگ نے موضوع کے حوالے سے اپنے کلیدی خطاب میں کہا کہ ہمیں اپنے معاشروں کو بے چینی کی کیفیت سے نکالنے کے لیے اپنے معاشی نظاموں کی اس انداز سے اصلاح کر نی ہو گی جو محض چند افراد کو فائدہ پہنچانے کی بجائے معاشرے میں رہنے والے ہر فرد کے لیے سود مند ہوں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت دنیا میں 8امیر ترین افراد کے پاس موجود دولت دنیا کے 3.6ارب غریب ترین افراد کے کل وسائل سے زیادہ ہے جو حالات کی سنگینی کی واضح دلیل ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں رائج معاشی نظام کو اصلاح کے لیے ایسے اقدامات کیے جائیں جن کی بدولت ہرفرد اپنے حصے کا منصفانہ ٹیکس ادا کرے اور جو خریدار اور اشیاء مہیا کرنے والوں کے حقوق کا یکساں تحفظ کرے۔

ایس ڈی پی آئی کےٍ ڈپٹی ایگزیکٹو ڈائریکٹرڈاکٹر وقار احمد نے اس موقع پرعدم مساوات اور غربت کے حوالے سے پاکستان کی صورت حال کا تفصیلی احاطہ کرتے ہوئے کہا کہ بلا واسطہ ٹیکسوں کا نظام کم آمدنی والے طبقات کے مفادات کے منافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ نظام غربت میں زندگی بسر کرنے والے گھرانوں کی مشکلات میں اضافے کا باعث ہے اور امیر طبقات کے مفادات کا تحفظ کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بلا واسطہ ٹیکسوں کو متوازن بنانے کے ساتھ ساتھ ہمیں معیشت کے مختلف شعبوں پر براۂ راست ٹیکس عائد کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ سول سوسائٹی کی جانب سے اس ضمن میں حکومت کو سفارشات پیش کی جا چکی ہیں جن پر توجہ دی جانی چاہئے۔

آکسفیم ان پاکستان کے کنٹری ڈائریکٹر محمد قزلباش نے اس سے قبل اپنے استقبالیہ کلمات میں ٹیکسوں کے امتیازی نظام نے عام آدمی کی زندگی کو انتہائی مشکل بنا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آکسفیم کا مطالبہ ہے کہ دنیا کی غریب ترین آدھی آبادی کے حالات میں بہتری لانے کے لیے معاشی نظام میں موجود عدم مساوات کو دور کیا جائے۔