Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

اُردو پوائنٹ

Published Date: Sep 23, 2019

معروف ترقی پسند مصنف و شاعر احمد سلیم کی نئی کتاب ’’پشاور کی فنکار گلیاں: 1980ء کے عشرے کی یادیں اور باتیں‘‘ کی تقریب رونمائی

معروف ترقی پسند مصنف و شاعر احمد سلیم کی نئی کتاب ’’پشاور کی فنکار گلیاں: 1980ء کے عشرے کی یادیں اور باتیں‘‘ کی تقریب رونمائی کا اہتمام کیا گیا۔ تقریب کا اہتمام پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) نے اسلام آباد میں کیا۔ تقریب کے دوران ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایس ڈی پی آئی ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ یہ کتاب میڈیا اور معاشرے کے درمیان تعلق کو اجاگر کرتی ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ احمد سلیم نے 1980ء کی دہائی کے پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) کے فنکاروں کے ساتھ اپنے جامع انٹرویو کے ذریعے اٴْن کی جدوجہد اور مشکلات کو قلم بند کرنے کی کوشش کی۔ انہوں نے کہا کہ کہ پائیدار ترقی کا خواب علم و ادب کی ترویج و فروغ کے بغیر شرمندہٴ تعبیر نہیں ہو سکتا۔

 

 

 

 

سابق سفیر شفقت کاکا خیل نے کہا کہ کتاب کا پہلا حصہ احمد سلیم کی یادوں اور اس کے پشاور میں اپنے قیام اور ادیبوں، شاعروں اور ٹیلی ویژن اداکاروں کے ساتھ تعلقات کو اجاگر کرتا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ احمد سلیم اپنی ذات میں ایک انجمن ہیں اور یہ کہ ان کی ادبی خدمات کا کوئی مقابلہ نہیں ہے۔ جنرل سیکرٹری گندھارا ہندکو بورڈ، پشاور ضیا الدین نے کہا کہ اس کتاب میں پشاور کے سماجی، ثقافتی، فنکارانہ، ادبی، لسانی اور سیاسی پہلوؤں کو محفوظ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ احمد سلیم نے اپنی کتاب میں پشاور کے فنون لطیفہ اور فنکاروں کے چھپے ہوئے خزانے کو دوبارہ دریافت کیا جو ادب کے لئے ایک عمدہ خدمت ہے۔

 

سیاسی کارکن اور احمد سلیم کے قریبی دوست بیرسٹر افتخار احمد نے کہا کہ احمد سلیم کسی فنکار سے کم نہیں۔ جس طرح اس کتاب میں پشاور کے 80ء کے عشرے کی کہانیاں قلمبند کی گئیں وہ کسی فن سے کم نہیں۔ سینئر ایڈوائزر کیمیکلز اینڈ پائیدار صنعتی ترقی ایس ڈی پی آئی ڈاکٹر محمود اے خواجہ نے کتاب کے مختلف حوالوں کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ اس کتاب میں پرٴْاسراریت کی خصوصیت ہے جو قاری کی توجہ کو آخر تک برقرار رکھتی ہے۔ اس موقع پر اردو ایڈیٹر اور ریسرچ فیلو ایس ڈی پی آئی ڈاکٹر حمیرا اشفاق اور ریسرچ ایسوسی ایٹ ایس ڈی پی آئی عائشہ الیاس نے بھی اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور پشاور کے فن و ثقافت کو اجاگر کرنے کے حوالے سے احمد سلیم کی کاوشوں کی تعریف کی۔

Source: https://www.urdupoint.com/daily/livenews/2019-09-23/news-2072847.html