Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Urdupoint

Published Date: Aug 12, 2020

https://www.urdupoint.com/daily/livenews/2020-08-11/news-2543844.html

ٹیکسٹائل کے شعبے میں برآمدات کے فروغ کے لیے حکومتی اقدامات وقت کی اہم ضرورت ہے،ماہرین

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – آن لائن۔ 11 اگست2020ء) ٹیکسٹائل کے شعبے کے لیے ٹیکسوں کا بہتر نظام متعارف کرانے سے اس شعبے میں برآمدات کے فروغ کے وسیع امکانات موجود ہیں۔ نجی و سرکاری شعبے سے تعلق رکھنے والے ماہرین اور معاشی تجزیہ کاروں نے اس امر کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کے تحت ’کورونا وبا کے دوران ٹیکسٹائل کے شعبے میں مسابقت کی اہلیت‘ کے زیر عنوان مشاورتی مکالمے کے دوران اپنی آرائ کا اظہار کرتے ہوئے کیا۔
عالمی بینک کی مالیات اور ادارہ جات کے لیے پروگرام لیڈ سیلیا رونتیانی نے موضوع پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ا یف بی آر اس شعبے میں معاونت کر سکتا ہے جس سے برآمد کنندگان کو سہولت مل سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حالیہ طور پر ایف بی آر نے جی ایس ٹی کی شرح میں کمی اور کسٹمز اور ڈیوٹی کی مد میں کئی سہولتیں بہم پہنچا کر شعبے کے لیے کاروباری آسانی پیدا کی ہے۔
انہوں نے کہا کہ ٹیکسوں کا ایسا نظام رائج کرنے کی ضرورت ہے جس کے بارے میں لوگوں کو تسلی ہو کہ اس میں اچانک تبدیلیاں رونما نہیں ہوں گی۔ایف بی آر کے سابق رکن محمد رضا باقر نے کہا کہ ٹیکسٹائل کا شعبہ بتدریج ویلیو ایڈیشن کی جانب بڑھ رہا ہے جو انتہائی خوش آئیند امر ہے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا وبا کی وجہ سے شعبے کو بری طرح نقصان پہنچا ہے جس کے ازالے کے لیے اقدامات کی ضرورت ہے۔
ایف بی آر کی سابق ممر رعنا احمد کا کہنا تھا کہ موجودہ ٹیکس نظام کمزور ہے جس میں بہتری کے ساتھ ساتھ ٹیکسٹائل کے شعبے پر ٹیکسوں کا براہء راست بوجھ کم کرنے کی ضرورت ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے جائنٹ ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر وقار احمد نے زور دیا کہ ٹیکس ری فنڈز کے اعدادو شمار آن لائن مہیا ہونے چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ نجی شعبے کو ساتھ لے کر چلنے کے لیے ایڈووکیسی اور ابلاغ پر مبنی کاوشوں کو زیادہ مربوط بنانے کی ضرورت ہے۔
انہوں نے کہا کہ ٹیکسوں میں استثنیٰ کے حوالے سے پیشگی شرائط میں نرمی لائی جائے۔ ڈائریکٹر جنرل کسٹمز، ایف بی آر، ثنائ اللہ ابڑو نے کہا کہ ایف بی آر نے ٹیکسٹائل کے شعبے کی سہولت کے لیے کئی سیکیمیں شروع کر رکھی ہیں۔ اسی طرح ’نیشنل سنگل ونڈو پروگرام‘ کے منصوبے کو آگے بڑھایا جا رہا ہے جس سے شعبے پر ریگولیٹری ڈیوٹی کے بوجھ میں کمی آئے گی۔ آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن ّایپٹما) کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر شاہد ستار نے ایف بی آر کے نظام پر تفصیلی گفتگو کرتے ہوئے بہتری کے لیے کئی تجاویز پیش کیں۔