Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

نوائے وقت

Published Date: Dec 6, 2019

پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی کی تین روزہ کانفرنس، 22ممالک کے محققین نے مقاجات پیش کئے

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی ) پالیسی ادار برائے پائیدار ترقی کی تین روزہ کانفرنس ختم ہو گئی۔ کانفرنس میں دنیا کے22 ممالک سے تعلق رکھنے والے بین الا اقوامی حیثیت کے حامل محققین نے مختلف موضوعات پر اپنے تحقیقی مقالہ جات پیش کئے۔ کانفرنس میں ماہرین تعلیم ، سماجی کارکن ، پارلیمان ، ماہرین قانون ، طبیب ،دانشور ، ماہر لسانیات کے علاوہ مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے بھر پور شرکت کی۔ سہ روزہ کانفرنس میں مختلف موضوعات پر پینل مباحثے بھی ہوئے۔ کانفرنس کے تیسرے دن کے اختتامی سیشن میں ’’لائ ف اینڈ ورک ا?ف لیونگ لیجنڈز ا?ف پاکستان پلینری‘‘ کے عنوان سے اپنے خطاب میں بزنس مین ، انسان دوست ، ماہر تعلیم ، لاہور یونیورسٹی ا?ف مینجمنٹ سائنسز کے بانی سید بابر علی نے کہا کہ وہ اپنی زندگی کے ہر لمحے سے لطف اندوز ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ اگر محنت لگن اور عزم سے کام کیا جائے تو منزل ا?سان ہو جاتی ہے۔ انہوں نے ایس ڈی پی ا?ئی اور دوستوں سے ان کی زندگی اور کام کو کیر مقدم کرنے پر شکریہ بھی ادا کیا۔ ایس ڈی پی ا?ئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے انسانیت کے لئے ان کی خدمات کے اعتراف میں انہیں ایک لیونگ لیجنڈ شیلڈ پیش کی۔ اس موقع پر وزیر اعظم کے مشیربرائے تجارت برائے تجارت ، ٹیکسٹائل ، صنعت وپیداوار ، اور سرمایہ کاری عبد الرزاق دائود نے بتایا کہ بابر علی نے لمزکس طرح قائم کیا۔ انہوں نے کہا ;34;یہ بابر علی کی زندگی کی کہانی نہیں بلکہ عزم اور حوصلے کی وہ داستان ہے جس نے لوگوں کے دلوں کو چھو لیا تھا اور اس نے میرے دل کو بھی چھو لیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ عزم سے ہی قو میں بنتی ہیں انہوں نے ڈاکٹر بابر کو ایک عظیم فنڈ ریزر قرار دیا۔ ائر ایجوکیشن کمیشن (ایچ ای سی) کے چیئرمین ڈاکٹر طارق بنوری نے کہا کہ ملک کی اصل تاریخ ان لوگوں نے بنائی ہے جنہوں نے مختلف شعبوں اور مختلف صلاحیتوں میں اپنی بے مثال جدوجہد کے ذریعہ اس ملک کو بنایا اور تعمیر کیا ،یہ لوگ اصل سرمایہ ہیں اس قوم کو اور اس کا احترام کرنا چاہئے۔ سابق مشیر برائے خارجہ امور ، سرتاج عزیز نے کہا کہ ڈاکٹر بابر علی ایک ادارہ ساز ، عظیم بزنس لیڈر اور سب سے بڑھ کر ایک محب وطن پاکستانی ہیں ، جو ہمیشہ اپنے آس پاس کی دیکھ بھال کرتے ہیں۔ خواتین کی حیثیت سے متعلق قومی کمیشن (این سی ایس ڈبلیو) کی چیئر پرسن خاور ممتاز نے ڈاکٹر بابر کی فن اور ورثہ کے تحفظ کے لئے کی جانے والی کوششوں اور اس کے ساتھ ساتھ ماحولیات اور جنگلی حیات کے تحفظ میں ان کی شراکت کی تعریف کی۔ چیئر پرسن ، بورڈ آف گورنرز (بی او جی) شفقت کاکا خیل نے کہا کہ ڈاکٹر بابر پاکستان کے لئے رول ماڈل ہیں اور انہوں نے بہت ساری نسلوں کو متاثر کیا۔ ڈاکٹر پرویز حسن ، سینئر ایڈووکیٹ ، سپریم کورٹ نے کہا کہ ڈاکٹر بابر علی نے متعدد شعبوں میں بہت سارے افراد کو با اختیار اور متاثر کیا اور وہ ان کی زندگی کا رول ماڈل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر بابر اصول پسند انسان ہیں جو کبھی بھی میرٹ پر سمجھوتہ نہیں کرتے ہیں۔ پروفیسر ڈاکٹر خالد حامد شیخ ، سابق وی سی ، پنجاب یونیورسٹی نے کہا کہ ڈاکٹر بابر کو اپنے ذاتی پروجیکشن کی پرواہ نہیں ہے بلکہ ان کی توجہ ہمیشہ معاشرے کی ترقی پر ہے۔اس سے قبل ، ڈیجیٹائزڈ ورلڈ میں فوڈ سیکیورٹی کے حصول کے بارے میں پینل بحث سے خطاب کرتے ہوئے نامزد سفیر برائے یورپی یونین کے وفد برائے پاکستان ، محترمہ آندروولا کمینہ نے کہا کہ پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں کے خطرات کے سلسلے میں ساتویں سے پانچویں پوزیشن پر آگیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صرف داخلی سندھ میں بیس لاکھ افراد خشک سالی کی وجہ سے خوراک کی قلت کا شکار ہیں۔ فیصل آباد یونیورسٹی کے ڈاکٹر بابر شہباز نے کاشتکاری میں اضافے کے حتمی مقصد کے ساتھ کسانوں کو نئی زرعی دریافتوں ، بہتر طریقوں یا اختراعات کو باضابطہ منتقلی کے عمل پر زور دیا۔ اس ٹیکنالوجی کی منتقلی سے کسانوں کی فصلوں اور فصلوں کی صلاحیت اور پیداواری صلاحیت میں بہتری آسکتی ہے۔ یونیورسٹی آف فلپائن کے ڈاکٹر آرنلڈ الپانو نے کہا کہ ہ میں سمارٹ فارم ڈویلپمنٹ کے لئے روڈ میپ تیار کرنے کی ضرورت ہے تاکہ تحقیق کا ایجنڈا ، پائلٹ ٹیسٹنگ اور انفارمیشن ایڈوکیسی شامل ہو۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو چاہئے کہ وہ کسانوں کی پیداواری صلاحیت کو بڑھانے کے لئے ڈیجیٹل ٹکنالوجی کے استعمال کو فروغ دینے کے لئے قابل ماحول ماحول فراہم کرے۔ سابق ایف بی آر چیئرمین ڈاکٹر محمد ارشاد نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی سطح پر مختلف ٹیکس اداروں میں ہم ا?ہنگی کا فقدان کاروبار کو بڑھنے میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک مختلف ٹیکس اور محصول وصول کرنے والے حکام اپنی کوششوں کو متحد اور ہم آہنگی نہیں کرتے ، محصولات کے ہدف کا چیلنج حل نہیں ہوگا۔ ;73; ڈاکٹر ارشاد نے کہا کہ نئی ٹیکنالوجیز اور آٹومیشن کا نظام اس چیلنج پر قابو پانے میں مدد کرسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیکس نظام کی خود کاری سے متعلق ایف بی آر کے موجودہ اقدامات کاسمیٹک اور سمجھ سے باہر تھے ، جس میں ڈیجیٹل حلوں میں بھاری سرمایہ کاری کے ذریعے ایک جامع ڈیجیٹل حل کی ضرورت ہے۔ ڈاکٹر ارشاد نے کہا کہ نئی ٹیکنالوجیز اور ا?ٹومیشن کا نظام اس چیلنج پر قابو پانے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔
 
Source: https://www.nawaiwaqt.com.pk/E-Paper/islamabad/2019-12-06/page-8/detail-39