Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Jul 14, 2021

پاکستان کو قابل تجدید توانائی کے شعبے میں عالمی سطح کے تجربات سے مستفید ہونے کی ضرورت ہے متنوقع قابل تجدید توانائی کے منصوبے شفاف توانائی کا قومی ہدف حاصل کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں، ماہرین

اسلام آباد پاکستان میں توانائی کے شعبے میں پائیدار تبدیلی کے لیے عالمی سطح پر قابل تجدید توانائی کے کامیاب منصوبوں سے مستفید ہونے کی ضرورت ہے۔ یہ تجربات توانائی کے شعبے میں بہتر پالیسیوں کی تشکیل میں معاون ثابت ہو سکتے ہیں۔ توانائی کے شعبے سے تعلق رکھنے والے ماہرین نے اس امر کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) اور پاکستان رینیوایبل انرجی کولیشن کے زیر اہتمام’ پاکستان میں متنوع قابل تجدید توانائی اور مستقبل کی سمت‘ کے  موضوع پر منعقدہ ویبنار کے دوران اپنی آراء ظاہر کرتے ہوئے کیا۔

عالمی بینک سے وابستہ توانائی کے شعبے کے ماہر اولیور نائٹ نے اپنی گفتگو میں متنوقع قابل تجدید توانائی پر عالمی بینک کی ایک حالیہ رپورٹ کے مندرجات بیان کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سولر توانائی کے علاوہ ونڈ مل کی استعداد بڑھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو اس شعبے میں سرمایہ کاری کی ضرورت ہے تاکہ سال 2030تک ملک میں 30%قابل تجدید توانائی کا ہدف حاصل کیا جا سکے۔

این ٹی ڈی سی کے شہباز احمد نے کہا کہ توانائی کی پیدوارکی استعداد بڑھانے کے حوالے سے منصوبہ برائے 2030پر نظر ثانی کی ضرورت ہے۔ پالیسی آلٹرنیٹ انرجی کے سید عقیل شاہ نے اپنی گفتگو میں کہا کہ ہمیں یہ پہلو پیش نظر رکھنے کی ضرورت ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ قابل تجدید توانائی کی ٹیکنالوجی کی قیمتوں میں کمی آ سکتی ہے۔

یو ایس ایڈ کے شفاف توانائی کے شعبے سے تعلق رکھنے والے ماہر امین لاکھانی کے توانائی  کی پیدوار میں 88%اضافہ این ٹی ڈی سی کے منصوبے میں شامل ہے۔پاکستان رینیوایبل انرجی کولیشن کے ذیشان اشفاق نے پاکستان کو توانائی کی پیداوار کے کے لیے مختلف وسائل استعمال کرتے ہوئے سماجی  و معاشی اثرات کو بھی پیش نظر رکھنا چاہئے۔

انسٹی ٹیوٹ آف انرجی اکنامکس کے سائمن نکولس نے زور دیا کہ پاکستان جنوبی آسٹریلیا کے قابل تجدید توانائی کے تجربات سے فائدہ اٹھا سکتا ہے جہاں ان منصوبوں پر کامیابی سے عمل درآمد کیا گیا۔توانائی کے شعبے کی ماہر  نائلہ صالح کا کہنا تھا کہ پاکستان میں آبادی کے ایک بڑے حصے کو اب بھی بجلی کی سہولت میسر نہیں۔ اس کی وجوہات کا سدباب وقت کی اہم ضرورت ہے۔ ایس ڈی پی آئی کی ڈاکٹر حنا اسلم نے اس سے قبل موضوع کے مختلف پہلوؤں پر تفصیلی روشنی ڈالی۔