Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Jun 23, 2021

پنشن کے موجودہ نظام میں اصلاحات وقت کی اہم ضرورت ہے خیبر پختونخوا حکومت نے اچھی پیشرفت کی ہے، صوبوں کے مالیاتی بوجھ میں اضافہ روکنا ہو گا، مقررین

اسلام آباد (                        ) خیبر پختونخوا کی صوبائی حکومت نے پنشن کی ذمہ داریوں کی بہتر انجام دیہی کے لیے ریٹائرمنٹ کی عمرپر نظر ثانی اور ملازمین کی طرف سے اس میں حصہ ڈالنے جیسے اہم اقدامات کیے ہیں۔انہوں نے کہا کہ خیبرپختونخوا ان اصلاحات پر کام کرنے والا پہلا صوبہ ہے اور ان کی بدولت پنشن کے نظام میں بہتری لائی جا سکے گی۔ اس امر کا اظہار انہوں ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ خیبر پختونخوا سفیر احمدنے پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) اور پائیدار توانائی اور معاشی ترقی (سیڈ)کے زیر اہتمام  ’حکومتی پنشنز اور مستقبل کی معاشی پائیداری‘  کے بارے میں رپورٹ کی رونمائی کے موقع پر کیا۔

خیبر پختونخوا میں سیڈ پروگرام کے ٹیم لیڈر حسان خاور نے کہا کہ پنشن کے حوالے سے اخراجات اور وسائل کی کمیابی صرف خیبر پختونخوا حکومت کا معاملہ نہیں بلکہ تمام صوبوں کو اسی صورت حال کا سامنا ہے۔انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا حکومت نے اچھی پیش رفت کی ہے اور باقی صوبوں کو اس کی تقلید کرنی چاہئے کیونکہ اس مسئلے کا پائیدار حل تلاش نہ کیا یا تو صوبائی حکومتوں کو ترقیاتی اخراجات کے حوالے سے شدید مسائل کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ایس ڈپی آئی کے جائنٹ ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر وقار احمد نے کہا کہ یہ امر خوش آئند ہے کہ خیبر پختونخوا حکومت نے ان اہم اصلاحات کی جانب پیش رفت کی ہے تا ہم ابھی بہت کچھ کیا جانا باقی ہے۔ پنشن سے متعلق مجموعی صورت حال کی عکاسی کرتے ہوئے کہا کہ وفاقی اور صوبائی سطح پر پنشن سے متعلق رقوم میں  تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اور یہ اخراجات ہر چار سے پانچ برسوں کے بعد دوگنے ہو جاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پنشن کے نظام میں اصلاحات کے حوالے اب کئی اقدامات کی ضرورت ہے جن میں انتظامی اخراجات میں کمی لانا بھی شامل ہے۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ دس برسوں کے دوران خیبر پختونخوا میں پنشن سے متعلق اخراجات میں دس گنا اضافہ ہو چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پے اینڈ پنشن سے متعلق سامنے آنے والی تجاویز پر عمل درآمد کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور کرنے پر توجہ دینی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ یہی صورت حال برقرار رہی تو آئندہ چند برسوں میں صوبے کے پاس مالیاتی گنجائش محدود تر ہو جائے گی اور حکومت چلانے کے اخراجات میسر نہیں ہوں گے۔

فیڈرل پے اینڈ پنشن کمیشن کے رکن عقیل رضا کھوجا نے رپورٹ میں پیش کی جانے والی تجاویز کو سراہتے ہوئے کہا کہ اس سے پورے ملک میں جامع پنشن اصلاحات لانے کی راہ ہموار ہو گی