Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Daily 92 News

Published Date: Jul 20, 2019

پورا نظام بدل رہے ہیں، آمدن پر ٹیکس جمع کر کے دکھائیں گے :شبر زیدی

اسلام آباد (خصوصی نیوز رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک) چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے کہا ہے کہ اشیا کے بجائے آمدن پر ٹیکس جمع کر کے دکھائیں گے ، ٹیکس کا پورا نظام بدل رہے ہیں، معیشت کو دستاویزی بنانے پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرینگے ، 50 ہزار سے زائد کی خریداری کرنے والے کو شناختی کارڈ دینا ہو گا، میں کہیں نہیں جا رہا عہدے پر قائم ہوں۔ شبر زیدی نے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا المیہ ہے کہ پاکستان میں اصل آمدن پر ٹیکس نہیں لیا گیا، ملک کو حوالہ ہنڈی نے نقصان پہنچایا، افغان ٹرانزٹ پر مناسب چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے سے بھی نقصان ہوا،صنعتوں کو ختم کر کے تجارت کو فروغ دیا گیا، امیروں سے ٹیکس لینے پر سب متفق ہیں، جس سے پوچھو پیسہ کہاں سے آیا کہتا ہے انعام نکلا ہے یا تحائف ملے ہیں۔چیئر مین ایف بی آر کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان میں بڑی کمپنیاں ہر سال 25 فیصد تک منافع کماتی ہیں، وزیراعظم بھی شناختی کارڈ کی شرط پر عملدرآمد چاہتے ہیں،ٹیکس فری ماحول کے عادی لوگ اس شرط کے مخالف ہیں، جو کمپنیاں گوشوارے جمع نہیں کرائیں گی متروک ہوجائیں گی۔انہوںنے کہا ویلتھ ٹیکس ہر صورت نافذ ہو گا ، پاکستانیوں کو اب ٹیکس کلچر اپنانا ہو گا۔ مانیٹرنگ ڈیسک کے مطابق اس موقع پر آئی ایم ایف کی نمائندہ ماریا ٹریسا نے کہا آئی ایم ایف کے بارے میں نظریات درست نہیں، مالیاتی ادارہ پاکستان میں منافع کمانے نہیں آتا، 25 فیصد بجٹ سود کی ادائیگیوں پر خرچ کیا جا رہا ہے جو کسی طور معیشت اور پائیدار ترقی کیلئے اچھا نہیں ۔ انہوںنے کہا حکومت کے پاس درآمدات کے پیسے ادا کرنے کی صلاحیت نہیں ۔ معاون خصوصی ڈاکٹر شمشاد اختر نے کہاسرمایہ کاری شرح کم ہوئی ، بچت نہیں ہوگی تو سرمایہ کاری نہیں ہوگی،معاشی اصلاحات کے ساتھ اداروں کی اصلاحات کی بھی ضرورت ہے ،مہنگائی کے بڑھنے کی شرح 18 فی صد تک پہنچ سکتی ہے ۔

Source: https://www.roznama92news.com/%D9%BE%D9%88%D8%B1%D8%A7-%D9%86%D8%B8%D8%A7%D9%85-%D8%A8%D8%AF%D9%84-%D8%B1%DB%92-%DB%8C%DA%BA-%D8%AF%D9%86-%D9%BE%D8%B1-%DB%8C%DA%A9%D8%B3