Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

SDPI Press Release

Published Date: Jul 6, 2017

ڈاکٹرثمن کیلے گاما پاکا شمار پاکستان کے دوستوں میں ہوتا تھا

وہ سیاسی مسائل ایک طرف رکھتے ہوئے معاشی تعاون کے فروغ کے خواہاں تھے، ایس ڈی پی آئی کے زیر اہتمام ریفرنس کے دوران مقررین کا اظہار خیال

اسلا م آباد ( ) سول سوسائٹی کے سرگرام کارکنوں اور ترقیاتی شعبے سے وابستہ ماہرین نے سری لنکا سے تعلق رکھنے والے ممتاز ماہر معاشیات ڈاکٹر ثمن کیلے گاما کی وفات پر دلی رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آنجہانی جنوبی ایشیا میں معاشی تعاون کے پر زور داعی تھے۔ پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کی جانب سے آن لائن تعزیتی ریفرنس جس کے دوارن پاکستان، بھارے، بنگلہ دیش اور سری لنکا سے تعلق رکھنے والے مقررین نے اظہار خیال کیا، ڈاکٹر ثمن کی خدمات کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے ریفرنس کے دوران اپنے ابتدائی کلمات میں کہا کہ ڈاکٹرثمن کیلے گاما جو سری لنکا کے انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی سٹڈیز کے سربراہ تھے، نے جنوبی ایشیائی ممالک کے درمیان اقتصادی و معاشی تعاون کے فروغ کے لیے غیر معمولی کا وشیں کیں۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر ثمن کو ہمیشہ پاکستان کے دوست کے طور پر یاد رکھا جائے گا اور انہوں نے جنوبی اشیائی اقتصادی سربراہ کانفرنس کے دو بار پاکستان میں کامیاب انعقاد میں اہم کردار ادا کیا۔ انہوں نے کہاکہ وہ سیاسی مسائل کو ایک جانب رکھتے ہوئے خطے میں معاشی تعاون کو فرغ دینے کی بات کرتے تھے۔

دوسرے مقررین جن میں سنجے کمار، ڈاکٹر رتناکر، پوش راج پانڈے، سیما بھاٹیہ ، کرن فرنینڈو، دیبا پریا، سلیم ریحان، سانگا مترا، ڈاکٹر گووند، دشنی ویرا کون، شیکھر شاہ، پارس کھرل و دیگر شامل تھے ، نے کہا کہ ڈاکٹرثمن نے آئی پی ایس میں کام کرتے ہوئے آزادانہ فکر اور معاشی استحکام کی وراثت باقی چھوڑی۔

مقررین نے ڈاکٹر ثمن کی زاتی اور پیشہ ورانیی زندگی کے مختلف پہلووں کو اجاگر کرتے ہوئے کہا کہ ان کی کمی نہ صرف سری لنکا میں محسوس کی جائے گی بلکہ خطے اور دنیا بھر میں ا ن کے دوست اور رفیق کار بھی ان کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھیں گے۔