Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Jan 3, 2019

ڑھتی ہوئی غصے کی لہر عالمی سطح پر جمہوریت کے لیے خطرہ ہے، ڈاکٹر عادل نجم

اسلام آباد (بدھ، 2 جنوری، 2019):
پارڈی سکول آف گلوبل افیر ، بوسٹن یونیورسٹی کے ڈین، پروفیسر ڈاکڑ عادل نجم نے کہا کہ عالمی سطح پر بڑھتی ہوئی غصے کی لہر نے ایکٹیوزم اور فعالیت کی جگہ لے لی ہے، جو دنیا بھر میں جمہوریتوں کے لئے سنگین نتائج مرتب کرے گی۔ دنیا بھر میں سیاست نے مقبولیت ، آمریت ، مطلقیت اور انتہا ئی قوم پرستی کی طرف تیز ی سے رخ کرلیا ہے، جبکہ عالمی سیاسی منظر نامے پر برطانیہ کے بریکسٹ کے فیصلے اورامریکہ میں ڈونالڈ ٹر مپ کا انتخاب عالمی سیاست میں ا یک بہت بڑ ا رجحان ہے ۔ 
160 وہ ان خیالات کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی ) کی زِیر اہتمام ’ نیو ورلڈ ڈس آرڈر’ کے عنوان سے اپنے ایک خصوصی لیکچر میں کر رہے تھے۔ اس موقع پرایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔
پروفیسر ڈاکٹر عادل نجم نے کہا کہ کچھ عالمی رجحانات جیسے سیاست برائے مخالف سیاست، مضبوط و آہن قیادت ، مقبولیت کی سیاست ، انتہا پسندی کی سیاست میں اضافہ ، انتہا ئی قوم پرستی کی سیاست اور احتجاج و خوف کا سیاسی آلے کے طور پر استعمال دنیا بھر میں جمہور یتوں کی تشکیل میں اہم کردار ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم سیاست برائے مخالف سیاست کے دورے میں رہ رہے ہیں، جہاں سیاست کو صرف خرابی اور برائی کے طور پر پیش کیا جاتا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا، یہ پاکستان، بھارت، ترکی اور امریکہ کے لئے ایک حقیقت ہے۔ 
ڈاکٹر نجم نے کہا کہ دنیا میں مضبوط قیادت کا بڑھتا ہوا مطالبہ نے آمریت ، مطلقیت کو جنم دیا۔ چین میں ذی جننگ، روس میں پوٹن ، ترکی میں رجب ایردوگان اور بھارت میں نریندرہ مودی اس کی چند مثالیں ہی۔ انہوں نے مزید کہا کہ دنیا بھر میں احتجاج میں بہت اضافہ ہوا ہے جسے مفادات حاصل کرنے کے لئے ایک سیاسی آلے کے طور پر بھی استعمال کیا جا رہا ہے ۔
ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ کہ گزشتہ دو دہائیوں میں عالمی سیاست دنیا بھر میں بدل رہی ہے، جس ہم ٹرمپ اور بریکسٹ کی شکل میں دیکھ سکتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے عالمی رجحان اور حال ہی میں افغانستان سے امریکہ کے جزوی انخلا پاکستان کی طرح کی حکومتوں کے لیے اشارہ ہیں کہ وہ اپنے ضروری گھریلو معاملات پر زیادہ توجہ دیں۔