Asset 1

Global Go To Think Tank Index (GGTTI) 2020 launched                    111,75 Think Tanks across the world ranked in different categories.                SDPI is ranked 90th among “Top Think Tanks Worldwide (non-US)”.           SDPI stands 11th among Top Think Tanks in South & South East Asia & the Pacific (excluding India).            SDPI notches 33rd position in “Best New Idea or Paradigm Developed by A Think Tank” category.                SDPI remains 42nd in “Best Quality Assurance and Integrity Policies and Procedure” category.              SDPI stands 49th in “Think Tank to Watch in 2020”.            SDPI gets 52nd position among “Best Independent Think Tanks”.                           SDPI becomes 63rd in “Best Advocacy Campaign” category.                   SDPI secures 60th position in “Best Institutional Collaboration Involving Two or More Think Tanks” category.                       SDPI obtains 64th position in “Best Use of Media (Print & Electronic)” category.               SDPI gains 66th position in “Top Environment Policy Tink Tanks” category.                SDPI achieves 76th position in “Think Tanks With Best External Relations/Public Engagement Program” category.                    SDPI notches 99th position in “Top Social Policy Think Tanks”.            SDPI wins 140th position among “Top Domestic Economic Policy Think Tanks”.               SDPI is placed among special non-ranked category of Think Tanks – “Best Policy and Institutional Response to COVID-19”.                                            Owing to COVID-19 outbreak, SDPI staff is working from home from 9am to 5pm five days a week. All our staff members are available on phone, email and/or any other digital/electronic modes of communication during our usual official hours. You can also find all our work related to COVID-19 in orange entries in our publications section below.    The Sustainable Development Policy Institute (SDPI) is pleased to announce its Twenty-third Sustainable Development Conference (SDC) from 14 – 17 December 2020 in Islamabad, Pakistan. The overarching theme of this year’s Conference is Sustainable Development in the Times of COVID-19. Read more…       FOOD SECIRITY DASHBOARD: On 4th Nov, SDPI has shared the first prototype of Food Security Dashboard with Dr Moeed Yousaf, the Special Assistant to Prime Minister on  National Security and Economic Outreach in the presence of stakeholders, including Ministry of National Food Security and Research. Provincial and district authorities attended the event in person or through zoom. The dashboard will help the government monitor and regulate the supply chain of essential food commodities.

Published Date: Feb 9, 2017

SDPI Press Release (February 9,2017)

اسلام آباد کے 422سرکاری سکولوں کو ’گرین سکول‘ بنایا جائے گا بہتر ماحول کے لیے حکومت اور سول سوسائٹی کا مل کر کام کرنا خوش آئیند ہے، ایس ڈی پی آئی اور پی وائی سی این کی تقریب سے خطاب

اسلام آباد ( ) سرسبز و شاداب پاکستان کے خواب کو عملی جامہ پہنانے کی ایک کڑی کے طور پر اسلام آباد کے سرکاری شعبے کے 422سکولوں کو ’گرین سکولوں‘ میں ڈھالا جائے گا۔ اس امر کا اظہار ڈپٹی مئیر اسلام آباد سید ذیشان علی نقوی نے یہاں شجر کاری مہم کا افتتاح کرتے ہوئے کیا۔ شجر کاری مہم کی افتتاحی تقریب میں مختلف سکولوں کے بچوں کی بڑی تعداد کے علاوہ مختلف شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والی شخصیات کی بڑی تعداد نے شرکت کی، کا اہتمام پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی ) اور پاکستان یوتھ فار کلائمیٹ نیٹ ورک (پی وائی سی این) نے وزارت ماحولیاتی تبدیلی کے اشتراک سے کیا تھا۔ شجرکاری کیاس مہم کا مقصد ’گرین پاکستان‘ کے نام سے قومی شجر کاری مہم کو تقویت دینا تھا جس کا آغاز پاکستان کے تمام صوبوں ، آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان میں ایک ساتھ کیا گیا ہے اور جس کے تحت ملک بھر میں 257ملین درخت لگائے جانے کا ہد ف رکھا گیا ہے۔ ڈپٹی مئیر اسلام آباد نے اس موقع پر کہا کہ حکومت اور سول سوسائٹی کے اداروں کا قومی مقصد کے لیے مل کر کام کرنا ایک خوش آئیند امر ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ توقع کی جانی چاہئے کہ نجی شعبہ بھی اپنی سماجی ذمہ داریوں کے تحت اس مقصد میں ہاتھ بٹانے کے لیے آگے آئے گا۔ جنگلات کی کٹائی اور اس باعث زہریلی گیسوں کے اخراج کی روک تھام کے لیے قائم ادارہ ( آر ای ڈی ڈی) کی نمائندہ ماجیلا کلارک نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ ان کا ادارہ جنگلات کے فروغ کی اہمیت کو اجا گر کرنے کی تمام کاوشوں میں ہاتھ بٹائے گا، انہوں نے کہا کہ آر ای ڈی ڈی وزارت ماحولیاتی تبدیلی کے ساتھ ملک کر اس ضمن میں پاکستان کے لیے پالسیی پر کام کر رہا ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے شکیل احمد رامے نے کہا کہ پی وائی سی این اور ایس ڈی پی اپنی اس کاوش کے ذریعے بہتر اور صاف ستھرے ماحول کے لیے درختوں کی اہمیت جو اجا گر کرنا چاہتے ہیں۔ایس ڈی پی آئی نے پی وائی سی این اور سول سوسائٹی کے دوسرے اداروں کے ساتھ ملک کر پشاور، کوئٹہ، کراچی اور لاہور میں بھی شجکاری مہم کی افتتاحی تقریبات کا انعقاد کیا اور ایک بہتر پاکستان کے لیے درختوں کی اہمیت پر ورشنی ڈالی۔